سائنس ریسرچ میلہ رپورٹ؛مراد علی شاہد دوحہ قطر

سائنس ریسرچ میلہ رپورٹ؛مراد علی شاہد دوحہ قطر
تحقیق، حقائق کو پرکھنے کا وہ سچ ہے جس کا حاصل ثمر گنجینہ بحرِ علم کے سوا کیا ہو سکتا ہے؟تحقیق ایسا فن ہے جو سرِمکتوم کو ایسے آشکار کرتا ہے جیسے صبح صادق آفتاب کی پہلی کرنیں اس کائنات کے ذرے ذرے کو تابندہ و درخشاں کر دیتی ہیں۔تحقیقی عمل اگر طالب علموں میں بیدار ہو جائے تو بلا شبہ علمی میدان میں ان کے لئے آسانیاں اور کامیابیاں ہی کامیابیاں پیدا ہو سکتی ہیں۔تحقیق سے طالب علموں میں علم کے حصول،کردار کی تربیت ،جنون اور کتب بینی جیسے جذبات بیدار ہونا شروع ہو جاتے ہیں۔ان تمام مذکور خصوصیات کو بلاشبہ مد نظر رکھتے ہوئے تمام اچھے تعلیمی ادارے تحقیقاتی سائنسی میلہ جات کا انعقاد کرواتے ہیں تاکہ بچوں میں تحقیقی دلچسپی پیدا ہو سکے۔پاک شمع کالج دوحہ قطر میں ایک ایسے ہی میلہ کا ینعقاد کیا گیا جس کو کالج نے سپریم ایجوکیشن کونسل گورنمنٹ آف قطر کے اشتراک سے منعقد کیا۔جس میں مختلف کلاسز کے طلبہ و طالبات نے اپنے سپر وائزرز کی زیرِ نگرانی مختلف موضوعات پر تحقیقی پراجیکٹس کو پائیہ تکمیل تک پہنچایا۔جیتنے والے پراجیکٹس اور سپروائزرز کے نام اس طرح تھے۔
بجلی پیدا کرنے میں ہوا کے دباؤ کا عمل(عصمت اللہ)۔کیا مستقبل میں E-LEARNING استاد کا متبادل بن سکے گی(مسز نادیہ شہباز)۔مناسب نیند اور تعلیمی بہتری کا آپس میں تعلق(مسٹر مسرت)۔قطر پر پابندیاں کیا غذائی قلت کا باعث ہو سکتا ہے؟(مراد علی شاہد)۔ گرین بیگ کے خام غذا پر مارفو فزیا لوجیکل اثرات(ارشاد علی)۔کیا ڈٹرجنٹ میں انزائم داغ دور کرنے میں معاون ہو سکتا ہے(مس تہمینہ)۔پراجیکٹس کے چیف جج ڈاکٹر فیضی راغب سائنٹیفک ریسرچ اسپیشلسٹ سپریم ایجوکیشن کونسل قطر جبکہ معاون ججز میں مظفر حسین صدر شعبہ انگریزی ،ازہر حیات وائس پرنسپل،ایم سجاد صدر شعبہ بیالوجی،ظہور احمد کو آرڈینیٹرشامل تھے۔تمام پراجیکٹس کی نوک پلک سنوارنے میں دو شخصیات قابل صد ستائش رہیں،محمد رفیق سائنس پراجیکٹس اور مظفر حسین آرٹس پراجیکٹس۔پروگرام کے انتظام و انصرام اور مجموعی طور پر کو آرڈینیشن ڈاکٹر امجد علی کے سپرد تھی جنہوں نے اس میلہ کے انعقاد میں بھر پور دلچسپی اور محنت کا مظاہرہ کیا۔پرنسپل نبیلہ کوکب اور کوآرڈینیٹرز شعیب اصغر و محمد اکرم نے خصوصی طور پر ہال کا دورہ کرتے ہوئے تمام طلبہ و طالبات سے مختلف سوالات پوچھے اور ان کی دلچسپی اور کاوش کو سراہا۔اختتام پر ایک مختصر سی تقریب میں جیتنے والے طلبہ و طالبات اور سپر وائزرز میں سرٹیفیکیٹ تقسیم کئے گئے اور تمام حصہ لینے بچوں سے خطاب کرتے ہوئے پرنسپل نے کہا کہ مجھے فخر ہے کہ گزشتہ سات سے ہم مسلسل ریسرچ پراجیکٹس مقابلہ جات منعقد کروا رہے ہیں۔اس سے نہ صرف ہم سب کو بلکہ طالب علموں کو بھی بہت کچھ سیکھنے کا موقع ملتا ہے۔لہذا میں تمام طالب علموں کو جنہوں نے اس میں حصہ لیا مبارکباد دیتی ہوں اور امید کرتی ہوں زندگی کے تمام شعبوں میںآپ اسی جانفشانی اور محنتِ شاقہ سے کام کرتے ہوئے ملک و قوم کا نام روشن کریں گے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Social Media Auto Publish Powered By : XYZScripts.com