’’وحید رضا عاجزکا شاہکار’’ سوچ دا سُورج‘‘

’’وحید رضا عاجزکا شاہکار’’ سوچ دا سُورج‘‘
تبصرہ :مجیداحمد جائی ۔۔ملتان شریف
سوچ دا سُورج ،وحید رضا عاجز کا شاہکارپنجابی شاعری مجموعہ پر مشتمل خوبصورت کتاب ہے ۔سرورق بہت پیار،دل کش ،خوبصورت اور دیدہ زیب ہے ۔بیک پر وحید رضا عاجز آنکھوں پر کالا چشمہ سجائے ،بہت سُندر لگ رہے ہیں ،ساتھ ہی پروفیسر خاور نوازش کی رائے دی گئی ۔آپ کی رائے جان کر وحید رضا عاجز کا علمی ،ادبی ،قد کاٹھ بارے معلومات ملتی ہے ۔سوچ دا سُورج 148صفحات پر مشتمل ہے ،خوبصورت سفید کاغذ کے ساتھ دِل کش کتاب ہے ۔اس میں سترہ غزلیں ،10واقعاتی دوہڑے ہیں اور 47دوہڑے اور 10بولیاں اور نظمیں شامل ہیں ۔اس کے علاوہ حمد ،سلام یا حسینؓ بھی شامل ہیں ۔
میری اکھ دی لال حویلی چوں نئی مُکدارش ہنجواں دا
تیری ذات گواہ ہے تَر رہندااے ویہڑا ہرویلے پلکاں دا
گھن وانگوں مینوں کھا گیا ہے دکھ نِکھڑگئیاں سنگتاں دا 
ایس کارن نوحہ لکھدا ھاں ڈَھل گئے عاجزؔ بختاں دا
ارشاد جالندھری ’’وکھڑیاں سوچاں دا شاعر‘‘کے عنوان سے وحید رضا عاجز کے بارے کہتے ہیں ’’وحید رضا عاجزمیرے ان شاگردوں میں سے ہے جن پر مجھے فخر ہے ۔
ایس واری عیدی جے بھیجیں کجھ وافر کفن سوا گھلیں
ایتھے پل پل زخمی مردے ہن ایناں زخمیاں کان دوا گھلیں 
کجھ سر کجھن لئی چھپرے دی بنھ چھپریاں وچ حیا گھلیں
جے بھیجیں نال دلاسے دی رت عاجزؔ اپنی لا گھلیں
’’وحید رضا عاجز دی شاعری وچ دھرتی دی خشبو‘‘کے عنوان سے پروفیسر خاور نوازش کہتے ہیں ۔عاجز نے سوچ دا سورج کے اندر اپنے عہد کے اقتصادی ،سیاسی اور معاشرتی حالات بارے جاندار جھلک پیش کی ہے ۔آگے بڑھتے ہوئے مزید کہتے ہیں کہ میں پُر اُمید ہوں کہ وحید رضا عاجز اپنی ماں بولی زبان کے ساتھ گہری محبت رکھیں گے ۔اس دوہڑے کو ہی دیکھیں
بے حسی ویکھ کے حاکم دی ساڈے ہتھ ماتم وچ رجھ گئے
میرے دیس دے سارے مال خزانے سردارو ڈھیرے ہجھ گئے
اساں ناں سدھرے قسم خدا دی دل بجھدے بجھدے بجھ گئے
اساں سمجھی کجھ دا کجھ رکھیا تھی عاجز ؔ کجھ توں کجھ گئے
’’سچیاں سوچاں دا بنجارہ ۔۔۔وحید رضا عاجز۔۔کے عنوان سے مرتضی ساجد صاحب کہتے ہیں ۔وحید رضا عاجز کو اللہ تعالیٰ نے حق اور سچ لکھنے کا ہنر عطا کیا ہے ۔اِن کی شاعری میں توکل ،تقویٰ،سچی سوچاں اور سُچا انمول خزانہ موجود ہے ۔
رکھدانہ میں گروی،پُتر ہوٹل تے 
کھاون جو گے جے کر دانے ہو جاندے 
صفی ہمدانی ’’وحید رضا عاجز قوم دی اکھ‘‘کے عنوان سے لکھتے ہیں کہ کسی قوم کے اندر شاعر کوایسی حیثیت حاصل ہوتی ہے جیسے جسم میں آنکھ کو ہوتی ہے ۔
اک ویلے دی روٹی نوں وی ترسن پئے غریب
آپے بھکے بھانے تسے مرسن پئے غریب
پیش لفظ میں ’’وحید رضا عاجز اپنے مختصر تعارف کے بعد دوستوں ،رشتوں داروں کی لمبی فہرست گنواتے ہیں ۔اگر ان کو مختصر کرکے اپنے بارے مکمل جان کاری دی جاتی تو قاری کے لئے سود مند ہوتا ۔
سوچ دا سُورج یہ کتاب 13ستمبر2017بمطابق 21ذوالحجہ کو منظر عام پر آئی اور اس کی مناسب اور معیاری قیمت 300روپے ہے ۔یہ کتاب طلحہ کمپیوٹر اینڈ Tcsفرنچائز کسوال سے منگوائی جا سکتی ہے ۔اس کتاب کو ساہیوال پرنٹنگ پریس نے نہایت نفاست سے شائع کیا ہے ۔
ہر روز دھماکے روز قتل حالات وِگڑدے ویندن 
دلوں بے شک ہاں مضبوط پر پیرا کھڑدے ویندن
ہن سوچاں پوہ دیاں دھپاں وچ جذبات سکڑدے ویندن 
اساں زرنوں عاجز کیہ کرنا گھر جدن اجڑدے ویندن
میں دُعا گوہوں کہ اللہ تعالیٰ ’’وحید رضا عاجز‘‘یونہی اپنی ماں بولی زبان میں شاعری کرتے ہوئے ،اقتصادی ،معاشرتی حالات کو صفحہ قرطاس پر بکھیرتا رہے ۔حق سچ کی آواز اٹھاتا رہے ۔وحید رضا عاجز آنے والے وقت میں ادب کے اُفق پر خوب چمکتانظر آتا ہے ۔اللہ کرے ان کا قلم جوان رہے اور یہ اپنے تخیل سے معاشرے کو سُدھارتا رہے ۔آمین !

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Social Media Auto Publish Powered By : XYZScripts.com