سورۂ فلق (منظوم تفہیم) >>>> عزیز بلگامی

سورۂ فلق 
(منظوم تفہیم)
میں رب کا نام لوں پھر’’سورۂ فلق ‘‘ کو پڑھوں
رحیم بھی ،وہی رحماں بھی ،جس کا ذکر کروں
(میرے نبی!ذرا) کہہ دیجیے(زمانے سے)
(ہر ایک فرد سے،ہرقوم، ہرٹھکانے سے)
پناہِ ربِّ فلق چاہیے مجھے ، شر سے
(عطا ہو مجھ کویہ سوغات ربِّ اکبر سے)
وہ شرجوخلق کیا اُس نے،(بس اُسی شرسے)
(ملے پناہ مجھے رب کی، شر کے پیکر سے)
پناہ! شر سے اندھیرے کے، جب وہ چھا جائے
(اندھیرا ایسا کہ جس میں نظر نہ کچھ آئے)
(بہت ہیں عام) شرورِزنانِ افسونگر
جو پھونک مارنے والی ہیں گرہوں کے اندر
میسّر آئے پناہ مجھ کو اِن کے شر سے بھی
(پناہ مجھ کوملے ، اِن کے ہر ہنر سے بھی)
(حسدکے شر سے حفاظت ،خدایا ! مجھ کو دے)
پناہ دے مجھے حاسد سے ، جب حسد وہ کرے

Azeez Belghamiعزیز بلگامی

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Social Media Auto Publish Powered By : XYZScripts.com