بچوں میں میں سرکشی اور نافرمانی کا عنصر کیوں؟ <<<<<< تحریر:ڈاکٹرظہوراحمد دانش 

تحریر:ڈاکٹرظہوراحمد دانش 
بچے خالقِ کائنات کا بہترین تحفہ ہیں، ان کی معصوم سی خوبصورت مسکراہٹ سے انسان اپنی تمام تکالیف اور پریشانیاں بھول جاتا ہے۔ والدین بچے کے لئے دنیا کی سب سے بڑی اور قیمتی نعمت ہیں جس کا نعم البدل کوئی بھی نہیں ہوسکتا۔ ہم میں سے ہر والدین کی یہی خواہش ہوتی ہے کہ اس کی اولاد ایک کامیاب ،با اعتماد اور پُرکشش شخصیت کا حامل ہو جو اس کے لئے باعثِ فخر اور اطمینان کا ذریعہ ہو۔ یہی وجہ ہے کہ بچے کہ پیدائش کے بعد سے ہی والدین اس کے مستقبل کے متعلق سوچنا شروع کر دیتے ہیں ۔ تاکہ وہ خوشگوار اور کامیاب زندگی گزار سکیں۔
یہی وجہ ہے کہ اسلام والدین کی اطاعت اور فرمانبرداری کو بچوں کے لئے لازمی قرار دیتا ہے۔والدین شکایت کررہے ہوتے ہیں کہ اس کا بچہ بہت شرارتی ہے ،پڑھائی میں بالکل دل نہیں لگاتا ،تو کوئی یہ کہتا ہے کہ اس کے بچے اس کی بات بالکل نہیں مانتے، دن بدن بدتمیزاور نافرمان ہوتے چلے جارہے ہیں ،کبھی والدین اپنے بچوں کو ڈھیٹ اور ضدی ہونے کا سرٹیفکیٹ جاری کر دیتے ہیں تو کبھی ان کو خود سر اور نافرمان قرار دیا جا رہا ہوتا ہے ۔
پہلے یہ جاننا ضروری ہوتا ہے کہ ایسا کیوں ہوتا ہے کہ بچے سرکش اور نافرمان ہو جاتے ہیں؟
بچوں کے بگاڑ میں عدم توجہی سب سے بڑی وجہ ہے۔ جب والدین مستقلًابچوں کو نظر انداز کرتے چلے جاتے ہیں تو ابتدا ہی سے وہ اپنی مرضی چلانے کا عادی ہو جاتا ہے۔ اور جوں جوں وہ بڑا ہوتا جاتا ہے ،اسکی یہ عادت پختہ ہوتی چلی جاتی ہے اور وہ خود سر ہو جاتا ہے پھر والدین کو یہ شکایت ہوتی ہے کہ بچہ ان کی بات نہیں مان رہا ہے۔ دراصل جب بچے کو ہماری ضرورت ہو تی ہے تو ہم اس پرتوجہ نہیں دیتے اور جب ہمیں اس کی ضرورت ہوتی ہے تو وہ ہماری ضرورت کو نظر انداز کر دیتا ہے۔
والدین کا رویہ :
ایک بات تو عام نظر آتی ہے کہ والدین اپنی مصروفیت کے اوقات میں بچوں کو عموماً ٹی وی کھول کر اس کے سامنے بٹھا دیتے ہیں کہ کچھ وقت وہ سکون سے اپنے امور انجام دے سکیں اور بچہ انہیں تنگ نہ کرے۔ ان کا خیال یہ ہوتا ہے کہ اتنے سے بچے کو کیا پتہ کہ ٹی وی پہ کیا آرہا ہے؟ یہ بہت بڑی غلط فہمی ہوتی ہے ،کیونکہ بچہ بہت تیزی سے اپنے اطراف کے ماحول سے سیکھتا ہے اور آج بچوں کے بگاڑ کی ایک بڑی وجہ یہی ہے کہ وہ جو کچھ ٹی وی پر دیکھتے ہیں، اپنی عملی زندگی میں بھی وہی کرنے کی کوشش کرتے ہیں اب یہ والدین کی ذمہ داری ہوتی ہے کہ وہ انہیں صحیح اور غلط ، اچھے اور بُرے کا فرق سمجھائیں۔ اگر والدین اس ذمہ داری سے پہلو تہی کرتے ہیں۔ تو اس کے بہت خطرناک نتائج سامنے آسکتے ہیں۔ 
مثلاً جب وہ ٹی وی لڑائی جھگڑے کے مناظر دیکھتے ہیں تو اس عمل کو وہ بہن بھائی پر apply کرتے ہیں ۔کسی کو ویڈیو میں گالی گلوچ سنتے ہیں تو پھر وہ اپنی گفتگو میں ایسے الفاظ لاتے ہیں ۔
بہت بڑی غلط فہمی :
آج کل والدین دو ڈھائی سال کے معصوم بچوں کو اسکول میں داخل کروا کے مطمئن ہو جاتے ہیں۔ کہ اس طرح ان کی بہت اچھی تربیت اور کردار سازی ہوجائے گی ۔ یہ وہ فاش غلطی ہے جس کا خمیازہ والدین کو ساری عمر بھگتنا پڑتا ہے۔ کیونکہ تربیت کا بنیادی ادارہ گھر اور والدین ہیں ۔آپ خود سوچیں اسکول وہ کام کیسے کر سکتے ہیں جو صرف گھر ہی میں ممکن ہو سکتا ہے۔ ٹیچر صرف ٹیچر ہے وہ والدین کی جگہ نہیں لے سکتا۔ عموماً والدین یہ سمجھتے ہیں کہ وہ جو کچھ کر رہے ہیں وہ درست ہے۔ اور جب بچہ وہی کام کرتا ہے ، تو فوراً ہی بچے کو ڈانٹتے ہوئے کہتے ہیں پتہ نہیں کہاں سے یہ غلط حرکتیں سیکھ کر آتے ہیں؟ جبکہ بچہ یہ غلط حرکتیں کہیں اور سے نہیں اپنے گھر سے ہی سیکھتا ہے ۔ مثال کے طور پر والدین اکثر اپنے بچوں کو ڈانٹتے ہوئے الفاظ کے استعمال پر کوئی توجہ نہیں دیتے اور غصّے میں جو کچھ منہ میں آتا ہے بولتے جاتے ہیں مثلاً (پاگل، گدھا، منحوس، بیوقوف وغیرہ) اور بعد میں یہی الفاظ جب بچہ استعمال کرنے لگتا ہے تو والدین شکورہ کررہے ہوتے ہیں کہ ان کا بچہ کتنا بدتمیز ہوتا چلاجارہا ہے؟ کسی کا ادب اورلحاظ ہی نہیں کرتا ؟ حالانکہ بچے سے زیادہ والدین کا قصور ہوتا ہے۔ ہر وقت کی روک ٹوک سے بچوں میں عدم اعتماد پیدا ہوتا ہے اور پھر ان میں قوت فیصلہ کی بھی کمی ہو جاتی ہے۔ گو کہ یہ والدین کا فرض ہے کہ بچے کو کھرئے اور کھوٹے پہچان کروائیں ،جبکہ بچوں کو مناسب حد تک آزادی دینا بھی ضروری ہوتا ہے تاکہ وہ اپنے دماغ سے سوچیں اور ان میں خود اعتمادی پروان چڑھے ۔ کیونکہ ہر وقت کی روک ٹوک سے بچے میں ضد، خوف، نفرت، اور ردِعمل کے طور پر منفی جذبات پیدا کر دیتی ہے۔ یوں اس کی تعمیری صلاحتیں بُری طرح متاثر ہوتی ہیں۔ اس لئے بچوں کو کامیاب اور پُراعتماد بنانے کے لئے ضروری ہے کہ انہیں مناسب حد تک آزادی اور خود مختاری دی جائے اور اس پر والدین نظر رکھیں کہ بچہ آزادی کا غلط استعمال تو نہیں کررہاہے۔
گھر تربیت کا اصل مرکزاور میدان ہے ۔جتنے اچھے اور مکمل انداز میں تربیت گھر میں ہو سکتی ہے وہ کہیں اور ہر گز نہیں ہو سکتی۔
محترم قارئین چند اہم نکات نوٹ فرمالیں :
نکات:(1)اپنی الاد کی تربیت پر توجہ دیں ۔۔۔(2)لاپرواہی کی صورت میں اولاد پر منفی اثرات مرتب ہوں گے ۔(3)گھر کے ماحول میں بہتری لائیں بچے کی پہلی درس گاہ گھر ہے ۔(4)اپنی اولاد کے لیے وقت نکالیں ۔ان سے جان نہ چھڑائیں ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Social Media Auto Publish Powered By : XYZScripts.com