آج ارشد نذیر ساحل (بارسلونا، سپین) کے ساتھ

Arshad Nazir Sahil

سراغ 
فلک کریدوں ،
کہ اس کے قدموں کی خاک چھانوں 
بگوُلے مو جِ وفا پہ رکھ کر ،
سمند روں سا لیے ہو ئے ظرف ، 
دشت وحشت کی دُھول چاٹوں ، 
یہیں کہیں پر ، 
میرے مقدر کا وہ ستا رہ !
چھپا ہو ا ہے ،
سراغ ملتا نہیں ہے جس کا 
میں تشنہ لب اور بھیگی پلکوں کیساتھ 
افسردہ دل لیے ،
کب سے منتظر ہوں 
یقین کی ڈوری سے خود کو باندھے 
گمُاں یہ ہونے لگا ہے مُجھ کو 
کہ ایک دن ایسا بھی ہو گا 
کسی چھناکے سے، 
منہ کے بل اس زمیں کے دامن میںآگرے گا 
جو مجھ سے بچھڑا ہے ،
آملے گا، 
میر ے مقدر کا وہ ستارہ!

ارشد نذیر ساحل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غزل 
ہم نے دوپل بھی کبھی ساتھ گزارے کب تھے 
اک گماں سا تھا فقط آپ ہمارے کب تھے
اک تو تھا کہ ہمیں تیرا بھرم رکھنا پڑا
ورنہ ہم لوگ کسی اور سے ہارے کب تھے
یہ بجا ہے کہ ادھر آکے نہ کچھ ہاتھ آیا
اسطرف بھی میری قسمت میں ستارے کب تھے
تیرے آنے سے مناظر ہیں سبھی رنگ بھرے
بن تیرے آنکھ کو جچتے یہ نظارے کب تھے
یہ نصیبا تو مرے گاؤں کے لوگوں ہی کا تھا
شہر میں تیرے بھلا ہجر کے مارے کب تھے
کتنے لوگوں سے تھا دن رات تعلق اپنا
ساتھ رہتے تھے مگر یار وہ سارے کب تھے
چارہ گرجس کو سمجھتے تھے ہمیں چھوڑگیا
ساحل اس دل کو زمانے کے سہارے کب تھے

ارشد نذیر ساحل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غزل 
لاکھوں تھے غمگسار ابھی کل کی بات ہے
کتنا تھا ہم سے پیار بھی کل کی بات ہے 
خواب و خیال میں بھی خزاں کا نا تھا گماں
آئی تھی اک بہار ابھی کل کی بات ہے 
اس بیکسی میں کو ئی بھی اب پو چھتا نہیں 
کتنے تھے سو گوار ابھی کل کی بات ہے 
مجبور ہوں بھلا نہیں سکتا تمہا ری یاد 
تھا دل پے اختیار ابھی کل کی بات ہے 
پژ مر دگی کا صحن چمن میں پڑاؤ ہے    
پھولوں پہ تھا نکھا ر ابھی کل کی بات ہے 
پوشاک فاخرہ میں جو ملبوس آج ہیں 
دامن تھاتار تار ابھی کل بات ہے
ساحل سے کس لیے ہے بھلا ان کو دشمنی 
کرتے تھے جاں نثار ابھی کل کی با ت ہے 

ارشد نذیر ساحل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غزل 
ادھورے جورہ گئے ہیں ان ارمانوں کا کیا ہو گا 
حقیقت سے جو عاری ہیں ان افسانوں کا کیا ہو گا
جو جل کر ہو گئے کشتہ وہی تو سر خر و ٹھہرے 
مگر جو بچ گئے ہیں ایسے پروانوں کا کیا ہو گا
اگر تو حید کے قا ئل سبھی ہو جائیں دنیا میں 
میں اکثر سو چتا ہوں پھر صنم خانو ں کا کیا ہوگا
بس اتنا سو چ لے پہلے درختوں کو جو کا ٹے ہے 
پرندوں کے بسیروں اور کا شانوں کا کیا ہو گا 
اگر ساحلؔ یہ خاموشی ہمیشہ ہی رہے طاری 
ہوائیں تندنہ آئیں گی تو طو فا نوں کا کیا ہو گا 

ارشد نذیر ساحل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل
وہ جس دن ساتھ ہو گا ذرہ زرہ کہکشاں ہو گا
زمیں بھی مہربان ہوگی فلک بھی مہرباں ہو گا
ہماری گفتگو میں ہونگے بس چاہت بھرے شکوے
محبت کا ہر اک لمحہ ہمارے درمیاں ہو گا
کبھی سوچا نہیں تھا چھوڑ جاؤ گے مجھے اک دن
کبھی سوچا نہیں تھا ہر طرف غم کا دھواں ہو گا
جہاں ہم آج بیٹھے ہیں یہاں کل دوسرے ہونگے
نجانے میں کہاں ہوں گانجانے تو کہاں ہو گا
چلو ہر اک غلط فہمی ہم اس سے دور کر آئیں
یونہی اوروں کی باتوں پر وہ ہم سے بد گماں ہو گا
تعلق کو بچانا ہے ہمیں ساحل ؔ ہر اک صورت
تعلق ٹوٹ جائے گاتو سب کچھ رائیگاں ہو گا

ارشد نذیر ساحل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غزل 
کوئی بتائے ، چاند ستارے کہا ں گئے 
اس چشم پُر فریب کے مارے کہا ں گئے 

ویران شام ، دل بھی ہے ہرآن بے قرار 
ایسے میں میرے راج دلارے کہاں گئے

سیلاب اشک ، خستہ دلی ، بے قرا ر روح 
اس عالم شباب کے دھا رے کہاں گئے 

طو فا ن کی زد میں آکے سمند ر کو چُپ لگی 
لہروں کی دیکھا دیکھی کنا رے کہاں گئے 

سینے سے ہو ک اٹھتی تھی مو ج انا کے ساتھ 
پھولیں جو تلخ سانسیں سہارے کہاں گئے

پت جھڑ کی سلطنت نے تویرانیاں ہی دیں 
ساحلؔ وہ ہم سفر تمہا رے کہا ں گئے 

ارشد نذیر ساحل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غزل
وہ مرے بعد مرے شہر میں آیا ہوگا
چاند کے ساتھ مجھے ہر جگہ ڈھونڈا ہو گا
دھوپ یادوں کی کہیں جب نکل آئی ہوگی
پیڑ سے لگ کے بہت دیر وہ بیٹھا ہو گا
ہائے وہ دن کہ اکٹھے ہی گزرتے تھے سدا
آج تنہا انہی راستوں سے وہ گزرا ہو گا
اپنے چہرے پہ ہوا ہوگا اسے میرا گماں
آئینہ جب بھی ذرا غورسے دیکھا ہو گا
اپنی تنہائی کو یادوں کے حوالے کر کے
دیپ جلتا ہوا پانی میں بہایا ہو گا
یہ تو سوچا بھی نہیں تھا کہ محبت میں کبھی
ہم نے اوروں کی طرح ملنا بچھڑنا ہو گا
آنکھیں غماز ہوا کرتی ہیں دل کی ساحل 
حال دل اس نے بھلا کیسے چھپایا ہو گا

ارشد نذیر ساحل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غزل
تیری یا دوں نے ہی روکا ہے جدھر گزرے 
تیرا دیوانہ کہاں جائے کدھر سے گزرے 
بیٹھے رہتے ہیں تیری راہ میں اکثر تنہا 
اسی امید شا ید تو ادھر سے گزرے 
بھیجتا رہتا ہوں اخبا روں میں اکثر اشعار 
کو ئی تو شعر میرا تیری نظر سے گزرے 
میرے غم کو نہ کبھی دل میں جگہ تم دینا 
دھیان تیرا نہ کہیں دیدۂ ترسے گزر    
آئیگا دیکھنے ایک روز کبھی ساحلؔ کو 
کتنے موجوں کے تھپیڑے جو ادھر سے گزرے 

ارشد نذیر ساحل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*

Social Media Auto Publish Powered By : XYZScripts.com